Archive for June, 2011

h1

The Saturday Interview: Musharraf on the curse of terrorism in Pakistan

June 12, 2011

Former Pakistan president General Pervez Musharraf led military coups in 1999 and 2007 before restoring democratic rule and serving as head of state. He is uniquely positioned to describe the situation in what many consider the most “dangerous country in the world” and the geopolitics in the region. He believes Pakistan, like Afghanistan, is a victim and is hurtling toward becoming a failed state, which will have grave ramifications worldwide. He was driven from office in 2008 and exiled in London after charges he was part of a conspiracy to kill Benazir Bhutto. He is committed to returning next year to seek election and has embarked on a campaign to improve understanding about the issues. Here are excerpts from his lecture, a press conference and two interviews with The Post’s Diane Francis this week at the Conference of Montreal.

Q What happens when the American, Canadian and other NATO troops leave Afghanistan?

A This will be a disaster unless Afghanistan is stable. It could lead to chaos, which will badly affect Pakistan, then India, the region and the world. This is what happened when the Americans left Afghanistan after the Soviets were defeated. I call this the Period of Disaster. There was no resettlement of the 25,000 mujahedeen fighters [recruited by the U.S. from refugee camps, including religious fighters led by Osama bin Laden]. They had been brought in by the Americans to fight the Soviets. After the withdrawal [in 1989], there was a vacuum. The Afghan elite had left for the U.S. and Europe, and the country was [in] anarchy, ravaged for years by having to fend for itself and returning to war-lordism. Four million refugees left Afghanistan for Pakistan. Then terrorists and the Taliban flooded Pakistan, tearing apart our socio-economic fabric. The biggest danger is that all these extremist elements are developing a nexus with Pakistan at the core.

Q How bad is Pakistan’s current condition and why are you going back?

A I think that the state is in great danger. My concern is Pakistan and I see at this moment nobody who can handle Pakistan so it’s nosediving down. GDP grew by 8.6% when I was head of state and now it’s 2.2%. The debt of the country has tripled in three years, or more than was accumulated in 60 years. The currency has [been devalued]. Foreign direct investment has collapsed, inflation is high, unemployment too.

Q Do you have support for your new party?

A There is support, or indications of that. Polling is difficult in the country, but the feedback from people, the media and rallies held in Pakistan is positive. We have a reasonable chance to win or to form a coalition with alternative parties to the People’s Party or PLN. I have 430,000 Facebook followers, 75% of whom are from Pakistan, which is another indicator.

Q What will you do if you win?

A We must reinforce the army and police and stop the curse of terrorism. This means extremists who misuse mosques, madrassas and organizations. This will not be an easy task, believe me. The main focus will be the development of the country and welfare of the people.

Q When you return to Pakistan how will you avoid the charges and jail?

A The charges are designed to scare me away. They are politicized. [My enemies] hope, when I return, to embroil me in them. But will I be jailed? Most likely not. This will not stop me.”

Q Are you not personally frightened after three assassination attempts on your life?

A If one is to think only of one’s own comfort, then I shouldn’t go at all. My wife is not pleased, but she will go along. My two children support my decision too.

Q Pakistan is being severely criticized and accused of harbouring bin Laden because the U.S. government claims he lived there for five years. How could that happen?

A I want the United States to provide evidence that he was there for five years. We must get rid of these conspiracy theories. I don’t believe it. I was president until 2008, and I knew nothing about this and would have. If he was there for a long time in one place, the explanation is complicity or failure. I believe it was failure or incompetence at a high level. This is human intelligence, which is not perfect. After all, there were more than a dozen terrorists who trained as pilots in the United States for months, hijacked four airplanes and caused 9/11 and the CIA had no idea. There is a joke in Pakistan that if bin Laden was living in a room for five years with three wives, he himself probably called the U.S. to come and kill him.

Q Why is there so much anti-American sentiment in Pakistan?

A For 42 years we were a strategic ally of the U.S. in Afghanistan then after 1989 we felt abandoned. There were sanctions imposed on us and a policy shift toward India, even though it had been squarely in the East camp with the Soviet Union while we had been in the West camp. Pakistan was used, then tossed aside, and this was seen as a betrayal. That’s why there must be trust restored between the U.S. and Pakistan.”

Q What role has India played in hurting perception of Pakistan’s victimization?

A A great deal. India is better at public relations and bigger too. Indians are everywhere. Israel and India lobby together against Pakistan. [India supported Palestinian independence until 1992, but then recognized Israel.] I believe we need to review relations with Israel at some point, but the Palestinian problem has to be resolved. That situation is very unpopular in Pakistan.

Q Is Pakistan’s nuclear arsenal safe from terrorists?

A Pakistan’s military is the stabilizing factor in the country. It protects Pakistan from external and internal conflicts, and the people always turn to the army to resolve conflicts. There are foolproof systems in place to protect the nuclear arsenal and there is no danger of its capture or control by terrorists or anyone else.

Q Should the military be in charge again to stabilize the country. Why don’t you lead another army takeover?

A I think military takeovers are no longer in fashion in the world, or in Pakistan, and the answer has to be found through democratic and political solutions. The only way to save Pakistan is to have unity between thought and action. If I can come back through an electoral mandate, I know the army and bureaucracy will follow me. There is no way the military will allow Pakistan to become a failed state. But there must be checks and balances. The most important check I instituted was the National Security Council, a voice where the military could convey its views.”

Source: National Post

h1

Musharraf draws five-point agenda for checking extremism within Pakistan

June 10, 2011

Washington, June 9 (ANI): Former Pakistan President Pervez Musharraf has come up with a five-point agenda for checking extremism within the country.

The former military ruler acknowledged that Pakistan also has to look inwards to resolve its sociopolitical conflict.

“We, as a nation, have to boldly demonstrate our resolve towards moderation and rejection of extremism from within our society. We have to follow, with courage, the five-point agenda that I created to check extremism within,” Musharraf wrote in a piece for CNN.

He said that the misuse of madrassas and mosques from preaching militancy of any form must be stopped.

No material spreading violence and militancy should be printed/published and sold or distributed, he added.

Musharraf also called for banning militant religious organisations and dening their reemergence under different names.

He also emphasised on the need to keep the religious syllabus and curriculum in schools under constant review to “prevent any teaching of controversial issues, which could lead to religious rigidity, extremism and intolerance.”

The implementation of a madrassa strategy to “mainstream Taliban into the social fabric of the nation” constituted Musharraf’s fifth agenda to check extremism in Pakistan.

The former president, however, acknowledged that all these points are easier said than done, saying that it needs a government that “comprehends the magnitude of the task, has the following of the people and the determination to change.”

Musharraf, who launched the All Pakistan Muslim League (PML) party in late 2010 with a view to running for office in 2013, said that in the present political scenario, none of the political parties or their leaders has the acumen to achieve such lofty ideals.

“We face an acute leadership vacuum. This has to be filled. We have to break the political status quo. We have to produce a political alternative to be seen domestically and internationally as viable and take it to victory through democratic means,” he said.

“Time is of essence for Pakistan. Too much water has flown under the bridge. The next elections will be the mother of all elections,” added Musharraf, who has vowed to return to Pakistan by March 23 next year to contest the upcoming general elections.

Source: Daily India

h1

Musharraf calls for bridging trust deficit

June 10, 2011

WASHINGTON, June 9 (UPI) — The most urgent need in the strained U.S.-Pakistan relations is to restore mutual trust, former Pakistani President Pervez Musharraf said.

In a 1,700-word column written for CNN, the former military ruler, now living in exile in Britain, said his country finds itself “in the eye of the terrorism storm” while an “environment of controversies, contradictions, distortions and mutual suspicions prevails all around, polluting and weakening the war on terror.”

Musharraf, who took power in Pakistan after a bloodless military coup in 1999 and now seeks to return home to run for office, said the current environment does not bode well for the global war on terror.

“The first and most urgent need of the hour is to restore trust. We must speak the truth with each other very openly and frankly. Pakistan needs to explain clearly why it is not acting against the Haqqani group (suspected of using Pakistani sanctuaries to attack coalition forces in Afghanistan) or when it will operate in North Waziristan.

“The intelligence agencies of Pakistan should be purged of any elements who may not be committed to the official line of fighting al-Qaida and the Taliban,” Musharraf said.

On Pakistanis’ “antipathy” toward the United States, Musharraf blamed it on the “abandonment” of his country after 1989 with a strategic shift of U.S. policy towards India and military sanctions against Pakistan. He said other reasons included the U.S.-India civilian nuclear deal, the U.S. military presence and operations in Afghanistan and its drone strikes in Pakistan’s tribal regions.

On the finding of the al-Qaida leader Osama bin Laden in the garrison town of Abbottabad before he was killed by U.S. forces last month, Musharraf blamed Pakistan’s “incompetence and callousness of the highest degree” in not being aware of bin Laden’s presence and ruled out any complicity with the militants.

He said any suggestion of complicity in hiding bin Laden in the country for five years would also involve him when he was president.

“I knew nothing about it, and I cannot imagine in my wildest dreams that the intelligence agencies were hiding it from me,” he wrote.

He said the United States must “trust” that Pakistan is committed to fighting terrorism in its own interest.

“We, as a nation, have to boldly demonstrate our resolve towards moderation and rejection of extremism from within our society,” he said.

Source: UPI Asia

h1

نائن الیون۔ کیا ہم کوئی دوسرا فیصلہ کرسکتے تھے؟

June 6, 2011

جنرل(ر) پرویز مشرف

پاکستان کا امریکہ اور اسکے اتحادیوں کا افغانستان میں طالبان کیخلاف حملے میں ساتھ دینا ایک بحث طلب معاملہ ہے۔یہ فیصلہ ہم نے جیو سٹرٹیجک حقائق کومکمل طورپر مدنظر رکھتے ہوئے کیا لیکن اس فیصلے پر تعریف اور تنقید دونوں کی جارہی ہیں۔ پاکستان میں دہشت گردی کے حالیہ واقعات کے بعد پاکستان کا نائن الیون کے حملوں کے بعد کا ردعمل زیادہ اہمیت اختیار کرگیا ہے۔اس لئے میں اپنا فرض سمجھتا ہوں کہ پاکستانی عوام کو تمام ضروری معلومات سے آگاہ کروں تاکہ وہ صورتحال کا بہتر طورپر ادراک کرسکیں۔ میری حکومت کا امریکہ کا ساتھ دینے کا فیصلہ درحقیقت میرے ماٹو ”سب سے پہلے پاکستان“ پر مبنی تھا۔ کچھ لوگوں نے مشورہ دیا کہ ہمیں امریکہ کی مخالفت کرتے ہوئے طالبان کاساتھ دیناچاہئے کیا یہ کسی بھی طرح پاکستان کے حق میں تھا؟ یقینی طورپر نہیں۔ اگر القاعدہ اور طالبان کو اس جنگ میں فتح ہوبھی جاتی تو بھی یہ پاکستان کے مفاد میں نہیں تھا کہ وہ طالبانائزیشن کو اختیارکرتا۔ طالبانائزیشن اختیار کرنے کا مطلب ہوتا کہ ہم ایک ایسے معاشرے میں رہ رہے ہیں جہاں خواتین کو کوئی حقوق حاصل نہیں، ا قلیتیں خوف کی حالت میں رہیں نیم پڑھے لکھے عالم انصاف کے رکھوالے بن جائیں ۔ میں اس قسم کی صورتحال کو پاکستان کیلئے کبھی بھی پسند نہ کرتا۔
فوجی نقطہ نظر سے یہ با ت واضح تھی کہ طالبان کو اس جنگ میں یقینی طورپر شکست ہوناہے اور پاکستان کیلئے یہ بہت نقصان دہ ہوتا کہ وہ ایک شکست خوردہ فریق کا ساتھ دیتا۔دنیا کی تنہا عالمی طاقت امریکہ نائن الیون کے حملے کے بعد زخمی اور شرمندہ ہوچکا تھا۔ افغانستان میں القاعدہ اور طالبان کیخلاف شدید ردعمل ناگزیر ہوچکا تھا۔ مجھے امریکہ کی طرف سے سخت لہجے میں پیغام دیا گیا کہ پاکستان کو یا تو ہمارا ساتھ دینا پڑے گا یا ہماری مخالفت کرنا پڑے گی۔ مجھے یہ پیغام بھی دیا گیا کہ اگر پاکستان نے امریکہ کی مخالفت کی تو اسے بمباری کے ذریعے پتھر کے دور میں پہنچا دیا جائے گا۔
یہ وہ صورتحال تھی جس میں ہمیں پاکستان کے حوالے سے انتہائی اہم فیصلہ کرنا تھا۔میری پوری توجہ اس بات پر مرکوز تھی کہ ایک ایسا فیصلہ کیاجائے جس سے پاکستان کو طویل المدتی فائدہ ہو اور وہ ہر قسم کے منفی اثرات سے بچارہے۔
امریکہ کے پاس افغانستان پر حملہ کرنے کیلئے کیا آپشن تھے؟ وہ شمال کی طرف سے ایسا نہیں کرسکتا تھا کیونکہ وہاں روس اور وسطی ایشیا کی ریاستیں موجود تھیں۔ وہ مغرب کی طرف سے ایران کے راستے سے بھی ایسا نہیں کرسکتا تھا۔ وہ صرف پاکستان کے ذریعے افغانستان پر حملہ کر سکتا تھا۔ اگر ہم راضی نہ ہوتے تو بھارت ایسا کرنے کیلئے تیار تھا۔ امریکہ اور بھارت کا اتحاد پاکستان کو روند کر افغانستان تک پہنچتا۔ ہماری فضائی اور زمینی حدود کی خلاف ورزی کی جاتی۔ کیاہم اپنی فوج کے ذریعے امریکہ اور بھارت کی مشترکہ قوت کا مقابلہ کرتے؟ بھارت ہماری طرف سے ایسے ردعمل پر بہت خوش ہوتا۔ یہ ایک مکمل طورپر بے وقوفانہ اور غیر عقلمندانہ ردعمل ہوتا۔ ہمیں اپنے سٹرٹیجک مفادات…. اپنی ایٹمی قوت اور کشمیر کے حوالے سے نقصان اٹھانا پڑتا۔ ہماری علاقائی خود مختاری بھی داﺅ پر لگ سکتی تھی۔
امریکہ اور مغرب سے ٹکراﺅ کے نتیجے میں اقتصادی صورتحال پر بھی سنجیدگی سے غور کرنے کی ضرورت ہے۔ پاکستان کی اہم برآمدات کا ذریعہ امریکہ اور یورپی یونین ہیں اور ہمارے ملک میں زیادہ سرمایہ کاری بھی وہیں سے ہوتی ہے۔ ہماری ٹیکسٹائل جو کہ ہماری برآمدات کا 60فیصد ہے وہ بھی یورپ کو برآمد کی جاتی ہیں۔ اس پرکسی بھی قسم کی پابندی سے ہماری صنعت کا گلا گھونٹا جاسکتا تھا۔ مزدوروں کی ملازمتیں کھو جاتیں۔ پاکستان کے غریب عوام کو اسی کا سب سے زیادہ نقصان ہوتا۔
ہمارے اہم ترین دوست چین کو بھی القاعدہ اور طالبان کیخلاف شدید تحفظات ہیں۔ چین میں مشرقی ترکستان اسلامک موومنٹ کی وجہ بھی افغانستان اور ہمارے قبائلی علاقوں کے واقعات ہیں۔ اگر ہم القاعدہ اور طالبان کا ساتھ دیتے تو چین بھی ہم سے خوش نہ ہوتا۔مسلم اُمہ بھی طالبان حکومت سے کوئی ہمدردی نہیں رکھتی تھی ترکی اور ایران طالبان کے سخت خلاف تھے۔ پاکستان کے علاوہ صرف متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب نے طالبان حکومت کو تسلیم کیا تھا۔ لیکن وہ بھی طالبان سے اس قدر مایوس ہوئے تھے کہ انہوں نے کابل میں اپنے سفارتی مشن بند کردئیے تھے۔
یہاں میں یہ بات بھی واضح کرناچاہوں گا کہ ہم نے امریکہ کی جانب سے پیش کردہ تمام مطالبات تسلیم کرلئے تھے۔ 13ستمبر2001 کو پاکستان میں امریکی سفیر وینڈی چیمبر لین میرے پاس سات مطالبات لیکر آئیں یہ مطالبات امریکی وزارت خارجہ کی جانب سے ہمارے فارن آفس کو بھی بھجوائے گئے تھے۔ جو مندرجہ ذیل تھے۔
1۔ اپنی سرحدوں پر القاعدہ کے کارکنوں کی سرگرمیاں روکی جائیں پاکستان کے راستے ہتھیاروںکی سپلائی کو روکاجائے اور بن لادن کیلئے ہرقسم کی لاجسٹک سپورٹ کا خاتمہ کیاجائے۔
2۔ امریکہ کو تمام ضروری فوجی اور انٹیلی جنس آپریشنز کیلئے پروازوں اور لینڈنگ کے حقوق فراہم کئے جائیں۔
3۔ امریکہ اور اتحادی فوجی انٹیلی جنس کو ضرورت کے مطابق اور دیگر فوجیوں کو دہشت گردوں اور ان کے سرپرستوں کیخلاف تمام ضروری آپریشنز کرنے کیلئے زمینی رسائی فراہم کی جائے جس میں پاکستان کی نیول پورٹس، ائیر بیسز اور سرحدوں پر سٹرٹیجک لوکیشنز بھی شامل ہوں۔
4۔ امریکہ کو فوری طورپر ایسی تمام انٹیلی جنس امیگریشن انفارمیشن اور ڈیٹا بیسز اور داخلی سلامتی کے بارے میں اطلاعات فراہم کی جائیں جن سے امریکہ اس کے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف دہشت گردانہ سرگرمیوں کو روکنے اور ان کا جواب دینے میں مدد مل سکے۔
5۔11ستمبر کے دہشت گرد اقدامات اور امریکہ ،اسکے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف کسی بھی قسم کی دہشت گردی کی کھلے طور پر مذمت کا سلسلہ جاری رکھا جائے اور امریکہ ،اس کے دوستوں یا اسکے اتحادیوں کیخلاف دہشت گردی کی حمائت میں ہر قسم کے اظہار رائے کو روکاجائے۔
6۔ طالبان کو ایندھن اور دیگر اشیاءو ریکروٹس بشمول براستہ افغانستان ایسے رضا کاروں کی ترسیل کا سلسلہ منقطع کیاجائے جو فوجی حملے یا دہشت گردی میں مددگار کے طورپر استعمال کئے جاسکتے ہوں۔
7۔ اگر افغانستان میں اسامہ بن لادن اور القاعدہ نیٹ ورک کے سرگرم ہونے اور افغانستان کے طالبان کی جانب سے ان کی مدد کرنے کی ٹھوس شہادت ملے تو پاکستان طالبان حکومت سے سفارتی تعلقات توڑے گا اور طالبان کی حمائت ختم کردے گا اور اسامہ بن لادن اور القاعدہ نیٹ ورک کو بیان کردہ طریقوں کے مطابق تباہ کرنے میں امریکہ کی مدد کرے گا۔
ان میں بعض مطالبات مضحکہ خیز تھے جیسا کہ ایسے تمام داخلی اظہار رائے کا سدباب کیاجائے جس سے امریکہ اسکے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف دہشت گردی کی حمائت کا تاثر ملتا ہو بھلا میری حکومت عوامی اظہار رائے کو کیسے دبا سکتی تھی جبکہ میں اظہار رائے کی حوصلہ افزائی کیلئے کوشش کررہا تھا؟ میں نے یہ بھی سوچا کہ ہم سے یہ کہنا کہ افغانستان سے سفارتی تعلقات توڑ دئیے جائیں اگر وہ اسامہ بن لادن اور القاعدہ کی حمائت جاری رکھیں حقیقت پسندانہ نہیں کیونکہ افغانستان تک رسائی کیلئے نہ صرف امریکہ کو ہماری مدد کی ضرورت ہوگی کم سے کم طالبان حکومت کے خاتمہ تک۔ لیکن ایسے فیصلے کسی ملک کا داخلی معاملہ ہے اور کسی کی جانب سے اسے ڈکٹیٹ نہیں کیاجاسکتا تاہم دہشت گردی کو اس کی ہر شکل میں ختم کرنا ہمارے لئے کوئی مسئلہ نہیں تھا ہم امریکہ کے اس کا شکار ہونے سے پہلے ہی ایسا کرنے کی کوشش کررہے تھے۔
ہم دوسرا اور تیسرا مطالبہ تسلیم نہیں کرسکتے تھے ۔ہم امریکہ کو اپنی فضائی حدود میں کھلی پروازوں اور لینڈنگ کے حقوق اپنے سٹرٹیجک اثاثوں کو خطرے میں ڈا ل کر بھلا کیسے دے سکتے تھے؟ میں نے ایک کو ریڈور فراہم کرنے کی پیشکش کی جو ہمارے حساس علاقوں سے خاصے فاصلے پر تھا ہم امریکہ کو اپنی سرحدوں پر نیول پورٹس، ائیر بیسز اور سٹرٹیجک مقامات کے اعتدال کی اجازت بھی نہیں دے سکتے تھے ہم نے نیول پورٹس اور فائٹر طیارو ں کے اڈے دینے سے انکار کردیا ہم نے امریکہ کو بلوچستان میں شمسی اور سندھ میں جیک آباد کے دواڈوں کے صرف لاجسٹکس اور ائیر کرافٹ ریکوری کے استعمال کی اجازت دی ان اڈوں سے کوئی حملہ نہیں کیاجاسکتا تھا ہم نے کسی بھی مقصد کیلئے ” بلینکٹ پرمیشن“ نہیں دی۔
ہم باقی مطالبات پورے کرسکتے تھے اور مجھے خوشی ہے کہ امریکہ نے کسی اعتراض کے بغیر ہماری جوابی تجویز قبول کرلی۔ میں اپنے اوپر لگائے جانے والے اس الزام پر حیران ہوں کہ میں نے کولن پاول کی ایک فون کال پر امریکہ کی تمام شرائط مان لیں جبکہ انہوں نے مجھے کوئی شرائط پیش ہی نہیں کیں۔ یہ شرائط تیسرے روز امریکی سفیر لائی تھیں۔
میں نے اپنا فیصلہ کرنے کے بعد اسے کابینہ کے سامنے پیش کیا پھر میں نے سوسائٹی کے مختلف طبقوں سے ملاقاتیں شروع کیں18ستمبر اور3 اکتوبر کے درمیان میں نے دانشوروں ، ممتاز ایڈیٹروں ،کالم نگاروں، ماہرین تعلیم، قبائلی سرداروں، طلباءاور لیبر یونین کے رہنماﺅں سے ملاقاتیں کیں۔18اکتوبر کو میں نے چینی وفد سے بھی ملاقات کی اور فیصلے پر تبادلہ خیال کیا اس کے بعد میں ملک بھر کی فوجی چھاﺅنیوں میں گیا اور فوجیوں سے بات چیت کی اس طرح میں نے اپنے فیصلے پر وسیع اتفاق رائے پیدا کیا۔
یہ ان تمام ممکنہ نقصانات کا تجزیہ تھا جو ہمیں امریکہ کے خلاف فیصلہ کرنے کی صورت میں اٹھانے پڑتے اس طرح میں نے ان سماجی اقتصادی اور فوجی فوائد کا تجزیہ کیا جو مغرب سے اتحادی کے باعث ہمیں حاصل ہوسکتے تھے میں نے دانشمندی پر مبنی اپنے فیصلے کی تمام تفصیلات بیان کردی ہیں اور اب مجھے اپنے اس فیصلے پر کوئی پچھتاوا نہیں ہے پاکستان کے وسیع مفاد میں یہ درست فیصلہ تھا مجھے یقین ہے کہ پاکستانیوں کی اکثریت اس سے اتفاق کرے گی۔

Source: Nawa-i-Waqt

%d bloggers like this: